دو خاندانوں نے کرپشن کو تحفظ دینے کے لیے اپنی خواتین کو ڈھال بنا کر عورت کے تقدس کو پامال کیا۔ ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان

وزیراعظم کی معاون خصوصی برائے اطلاعات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے سابق صدر آصف علی زرداری کی بہن فریال تالپور اور سابق وزیراعظم نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز سمیت کسی کا نام لیے بغیر کہا ہے کہ دو خاندانوں نے کرپشن کو تحفظ دینے جعلی اکاؤنٹس اور منی لانڈرنگ کے لیے اپنی خواتین کو ڈھال بنا کر عورت کے تقدس کو پامال کیا انہیں چاہیے کہ اپنے اعمال کا محاسبہ کریں احتساب کے عمل کا نہیں۔ سوشل میڈیا پر اپنے جاری کردہ بیان میں ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ وزیراعظم پاکستان کو ریاست مدینہ کے اصولوں پر قائم کرنے کی جانب گامزن ہیں۔



ریاست مدینہ میں مرد اور عورت کی تفریق کے بغیر قانون کا یکساں اطلاق بنیادی اصول تھا۔
دوسری جانب سے ایسا لگتا ہے کہ مسلم لیگ نون نے ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان کے بیانات پر جواب دینے کا فریضہ رانا ثناء اللہ کو سونپ دیا ہے رانا ثناء اللہ نے جوابی بیان میں کہا ہے کہ دس مہینے میں حکومت میں پانچ ہزار ارب قرضہ لیا وہ کہاں گیا فردوس باجی ساری اپوزیشن کو بھی جیل میں ڈال دیں پھر بھی عوام دشمن بجٹ پاس نہیں ہوگا۔ رانا ثناء اللہ نے کہا ہے کہ فردوس باجی پچھلی دفعہ وزارت سے فارغ ہوئیں تو سرکاری کراکری بھی ساتھ لے گئی تھیں اس بار ان کو دی گئی کراکری کی ضمانت لےلی جائے بلکہ ایڈوانس سیکیورٹی رکھوالی جائے ایسے لوگوں کو وزارتوں کی بجائے اصلاحی سینٹرز میں بھیجا جاتا ہے تاکہ معاشرے کے لیے خطرہ نہ بنیں۔



رانا ثناء اللہ نے کہا کہ فردوس باجی آپ نے وزیر کی کرسی پر بیٹھ کر سرکاری بسوں اور دوائیوں میں کرپشن کی آپ نے وزیر کی کرسی کو انکوائری کے خلاف ڈھال بنایا ہوا ہے۔
ادھر نیب کے ہاتھوں گرفتار ہونے والے حمزہ شہباز شریف کا کہنا ہے کہ  میں نیب  حوالات قرآن کی تفسیر پڑھ رہا ہوں ان کا کہنا ہے کہ کفن کی کوئی جیب نہیں ہوتی میں کرپشن سے متعلق سوچ بھی نہیں سکتا انتقام اور بغض رکھنے والا بالآخر خود ہی اس میں جل کر راکھ ہو جاتا ہے مجھے اللہ نے توفیق دی ہے میں نیب حوالات میں بھی تلاوت قرآن پاک اور اس کی تفسیر پڑھ رہا ہوں۔ دوسری طرف قومی احتساب بیورو کے ہاتھوں گرفتار ہونے والی فریال تالپور کو تفتیش کے لیے عدالت نے 90 روزہ جسمانی ریمانڈ پر نیب کی تحویل میں رکھنے کی اجازت دی ہے نیب اعلامیہ میں پہلے ہی بتا چکی ہے کہ فریال تالپور کے تقدس کو پامال نہیں کیا جائے گا اور انہیں ان کی رہائش گاہ پر ہیں قید رکھا جائے گا اسلام آباد کے ایف ایٹ علاقے میں واقع زرداری ہاؤس کو سب جیل قرار دیا جا چکا ہے۔ ادھر نیب کے ہاتھوں گرفتار ہونے والے پنجاب کے وزیر جنگلات سبطین خان مستعفی ہوگئے ہیں اور عدالت نے ان کا دس روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کرلیا ہے۔