بلاول نے اٹھارویں ترمیم سول کورٹس اور مسنگ پرسن کے معاملے پر پیچھے ہٹنے سے انکار کر دیا

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے اور مسلم لیگ نون کی نائب صدر اور سابق وزیراعظم نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز شریف کی جانب سے لنچ کی دعوت قبول کر لی ہے لاہور میں پارٹی میٹنگ کے لیے پہنچنے کے بعد صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری نے کہا کہ عمران خان کی کٹھ پتلی حکومت ملکی مسائل حل کرنے میں سنجیدہ نہیں ہے اس لئے ہم ان لوگوں  کے ساتھ ملیں گے اور بات کریں گے جو ملکی مسائل کے حل کے لیے سنجیدہ ہیں ۔بلاول بھٹو  زرداری نے کہا کہ جتنا دباؤ ڈالنا ہے ڈال لیں میرے پورے خاندان کو اندر کرنا ہے کر دیں لیکن اٹھارویں ترمیم سول کورٹس اور مسنگ پرسن کے معاملات پر اپنے اصولی موٗقف سے پیچھے نہیں ہٹیں گے۔



ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ میری اپنی پارٹی ہے میں اپنی پارٹی کا حامی ہوں میں پی ٹی آئی کسی دوسری پارٹی کا حامی نہیں لیکن آئین اور قانون میں جو حقوق سب کو حاصل ہیں ان پر میں بات کرتا رہوں گا انسانی حقوق اور آئینی حقوق اس بات کی ضمانت دیتے ہیں کہ ہمیں بولنے کی آزادی ہو ۔وزیرستان کے ارکان اسمبلی ہو ں لاڑکانہ اور نوابشاہ کے ارکان اسمبلی ہو جب آپ انہیں بجٹ اجلاس میں نہیں آنے دیں گے تو آپ کو غیر آئینی اور غیر قانونی کام کرتے ہوئے ان علاقوں کے عوام کو بجٹ اجلاس سے الگ رکھ رہے ہیں ۔ارکان اسمبلی کے پر و ڈ کشن آرڈر جاری ہونے چاہیئں ۔