خاندانی منصوبہ بندی میں صرف سندھ ہی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کر رہا ہے۔

خاندانی منصوبہ بندی میں صرف سندھ ہی بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کر رہا ہے۔

اور تمام کریڈٹ میڈم منسٹر ڈاکٹر عذرا فاضل پیچوہو کو جاتا ہے۔

ملک میں بڑھتی ہوئی آبادی کو روکنے کیلئے قائم متعلقہ ادارے ناکام رہے اور سال 2018-19کے مقابلے میں 2019-20میں آبادی میں اضافے کے اقدامات میں 24.5فیصد کمی ہوئی ،صوبہ سندھ کی کارکردگی میں اضافہ ریکارڈ ،کورونا نے فیملی پلاننگ پروگرام کو متاثر کیا، پاکستان بیورو آف شماریات کی جاری رپورٹ کے مطابق مانع حمل اقدامات کے تحت سوائے صوبہ سندھ کے دیگر تمام صوبوں اور علاقوں میں واضح کمی دیکھنے میں آئی ، سال 2018-19کے مقابلے میں سال 2019-20 میں پنجاب میں مانع حمل اقدامات میں 19.2فیصد ،خیبرپختونخوا میں 74.1فیصد ، بلوچستان میں 19فیصد کمی ہوئی جبکہ صوبہ سندھ میں مانع حمل اقدامات میں 10.3فیصد اضافہ ہوا ہے۔

جیوے پاکستان میڈم منسٹر اور ان کے تمام شعبہ کو مبارکباد پیش کرتا ہے

یہ سیکریٹری آبادی ریحان بلوچ اور ٹیکنیکل ایڈوائزر طالب لاشاری کی مخلصانہ کوششوں کے بغیر ممکن نہیں تھا۔
محکمہ آبادی سندھ نے بہت زیادہ اقدامات کیے ہیں اور ان کے مثبت نتائج باقاعدگی سے آرہے ہیں۔