کمشنر کراچی افتخارشالوانی کا وائی ایم سی اے میں ناجائز تجاوزات اور تجارتی سرگرمیوں کے خاتمہ کے بعد دورہ

کمشنر کراچی افتخارشالوانی نے  وائی ایم سی اے کے  دورے کے دوران کہا کہ سپریم کورٹ کے فیصلہ کی روشنی میں دوبارہ بحالی اور اسی روایتی سرگرمیوں سے خدمات انجام دیگا۔
طالبعلموں کوتفریحی و صحت مند سرگرمیوں کیلیے ادارہ کو بھرپور تعاون ہر ممکن مدد اورمسلسل رابطہ رکھا جائیگا۔
ادارہ کی دوبارہ تاریخی حیثیت بحال اور قائم رکھی جائیگی۔
عمارت کو اصلی حالت میں لانے کیلیے وہی آرٹ و آرکیٹیکٹ کا استعمال کرکے مرمت و تزئین او آرائش کی جائے۔
ماسٹر پلان کے تحت تمام ملبہ فوری طورپر صاف کرکے مکمل صفائی ستھرائی کو یقینی بنایا جائے۔
کراچی – کمشنر کراچی افتخارشالوانی نے سپریم کورٹ کے فیصلہ کی روشنی میں وائی ایم سی اے میں ناجائز تجاوزات اور تجارتی سرگرمیوں کے خاتمہ کے بعد تفصیلی دورہ کیا اس موقع پر انکے ساتھ اسٹنٹ کمشنر آرام باغ مطاہر وٹو، پرنسپل وائی ایم سی اے مشتاق مسیح، سیکریٹری وائی ایم سی اے بابر پال، ڈائریکٹرانکروچمنٹ کے ایم سی بشیر صدیقی اوردیگر تھے۔



کمشنر کراچی افتخار شالوانی کو پرنسپل وائی ایم سی اے مشتاق مسیح نے سپریم کورٹ کے فیصلہ کے بعد کئی گئی کارروایوں کے بارے میں آگاہی دیتے ہوئے کہا کہ 1905 سے ادارہ نصابی و غیر نصابی سرگرمیوں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتا رہا ہے ا ور 2007 کے بعد یہ سرگرمیاں قابظین کی وجہ سے ختم ہوگئی لیکن سپریم کورٹ اور انتظامیہ کے تعاون کے باعث ادارہ اب دوبارہ بحالی اور اسی روایتی سرگرمیوں سے خدمات انجام دیگا۔کمشنر کراچی افتخار شالوانی نے پرنسپل کو کہا کہ سپریم کورٹ کے فیصلہ کے بعد حکومت وانتظامیہ نے مکمل طور پر فیصلہ پر عملدآمد کرانے کیلیے بھرپور تعاون اور مدد فراہم کی ہے اب مکمل طور پرادارہ اپنی روایتی نصابی و غیر نصابی سرگرمیوں کیلیے پہلے سے زیادہ خدمات انجام دے سکتا ہے اب اس میں طالبعلموں کو ہاکی، کرکٹ، فٹبال، تیراکی و دیگرتفریحی و صحت مند سرگرمیوں کیلیے ادارہ کو بھرپور تعاون ہر ممکن مدد اورمسلسل رابطہ رکھا جائیگا جس سے ادارہ کی دوبارہ تاریخی حیثیت بحال اور قائم رکھی جاسکے۔



کمشنر کراچی افتخار شالوانی نے ادارہ کے دیگر حصوں آڈیٹوریم، اسکول، فنی تربیت کی عمارت، لائبریری اور 50 کمرون پر مشتمل ہاسٹل کا بھی معائنہ کیا اور وہاں پردی جانے والی سہولیات کا جائزہ لیا پرنسپل مشتاق مسیح نے بتایا کہ 2007 سے کورٹ ناظر کے پاس45 ملین روپیہ پڑا ہے اگر وہ مل جائے تو ادارہ و ہاسٹل کی مرمت و تزئین و آرائش اور1200 طالبعلمون کو تفریحی و صحتمند سرگرمیوں کا بھی فروغ ممکن ہوسکتا ہے۔کمشنر کراچی افتخار شالوانی نے اس موقع پر یقین دلایا کہ وہ اس سلسلے میں اپنا کردار ادا کرینگے اور کہاکہ تاریخی عمارت،ہاسٹل و اسکول کی مرمت اور تفریحی و صحتمند سرگرمیوں کے فروغ کیلیے تزئین او آرائش کویقینی بنانے کیلیے عمارت کو اصلی حالت میں لانے کیلیے وہی آرٹ و آرکیٹیکٹ استعمال کیا جائے جو پوری عمارت میں استعمال ہوا ہے لہذا اسکو قابل استعمال بنانے کیلیے انتظامیہ ادارہ کو بھرپور تعاون فراہم کریگی اور مثبت سرگرمیوں کو فروغ بھی دیگی۔سپریم کورٹ میں اسکی عملدرآمد رپورٹ کے ساتھ شہر کی خوبصورتی اور ترقی کیلیے اٹھائے گئے مثبت اقدامات میں بھی اسکو شامل کرنے کیلیے مشترکہ طور پر بحالی اور اسے قائم رکھنے کیلیے بھی کام کرینگے اور یہ ادارہ بھی اپنا حصہ ڈالے گا۔



عید کے بعد  کمشنر کراچی  اسکول کی چھٹیوں کے بعد دوبارہ تفصیلی دورہ کرینگے اور وائی ایم سی اے کے عالمی نمائندے]جب دوبارہ کراچی آئینگے سے بھی ادارہ کی فلاح و بھبود کیلیے مشترکہ طور پر لائحہ عمل ترتیب دینگے۔انہوں نے رہائشی کوارٹرز کی دوبارہ بحالی و مرمت کیلیے بھی ہدایات دی کہ ان کونئے سر ے سے بہتر حالت میں ماسٹر پلان کی تمام تر سہولیات کو مد نظر رکھ کر تعمیر کئے جائیں اور تمام ملبہ فوری طورپر صاف کرکے مکمل صفائی ستھرائی کو یقینی بنایا جائے۔