ایل بی او ڈی اسکیم تکمیل سے تھر کول بلاک II کو پانی فراہم ہوگا، سید مراد علی شاہ

کراچی –  وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ ایل بی او ڈی اسکیم تکمیل سے تھر کول بلاک II کو پانی فراہم ہوگا اور یہ انرجی کے شعبے میں مزید سرمایہ کاری کیلئے نہایت اہم ہے، لہٰذا پری ٹریٹمنٹ کے لیے خاطرخواہ ٹیکنالوجی مثلاً ریورس آسموس (RO) یا ممبرنس بائیو میٹرک(MBR) کو جتنا جلدی ہوسکے منتخب ہوجانا چاہیے ۔ یہ بات انھوں نے وزیراعلیٰ ہاؤس کے کمیٹی نمبر 1 میں منعقدہ تھرکول بلاک II کے لیے نبی سر میں آر او پلانٹ کیلیے پری ٹریٹمنٹ انسٹالیشن سے متعلق اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی۔ اجلاس میں وزیر توانائی امتیاز شیخ، وزیراعلیٰ سندھ کے معاون خصوصی برائے آبپاشی اشفاق میمن، چیئرمین پلاننگ اینڈ ڈیولپمنٹ ناہید شاہ، سیکریٹری توانائی مصدق خان، سیکریٹری خزانہ نجم شاہ، سیکریٹری آبپاشی ڈاکٹر سعید منگیجو، حبکو کے سی ای او خالد مسرور، ایس ای سی ایم سی کے سی ای او ابوالفضل رضوی، ٹیل اینڈ تھل نوا کے سی ای او سلیم اللہ میمن، اینگرو انرجی کے سی ای او احسن ظفر سید، تھر کول پراجیکٹ کے سپرنٹینڈنٹ انجنیئر ایری گیشن حاجی خان جمالی و دیگر متعلقہ افسران نے شرکت کی۔ اجلاس میں وزیراعلیٰ سندھ کو بتایا گیا کہ نبی سر میں تھرکول بلاک II کے لیے حکومت نے 3.25 بلین روپے کی منظوری دی تھی۔



یہ اسکیم آر او پلانٹ کو 60 کیوسک خام پانی کی ٹریٹمنٹ کے لیے تیار کی گئی تھی، پری ٹریٹمنٹ کا ڈئزائین الٹرا فلٹریشن کی بنیاد پر مبنی تھا۔ بعد ازاں، اس اسکیم پر کام روک دیا گیا اور ایس ای سی ایم اور پاور کمپنیوں کی درخواست پر، 14.3 بلین روپے کی ایک نظرثانی شدہ اسکیم تیاری کی گئی جوکہ ممبران بائیو ریکٹر (ایم بی آر) ٹیکنالوجی کی بنیاد پر تھی اور اسکا ڈزائین 75 کیوسک انفلو کے لئے تھا۔ اجلاس میں محکمہ پلاننگ اینڈ ڈیولپمنٹ نے 3.25 ارب سے 14.325 ارب روپے کی لاگت میں اضافہ کے حوالے سے سنجیدہ اعتراضات اٹھائے، لہٰذہ اس معاملہ کو صوبائی کابینہ کے حوالے کیا گیا ہے۔ کابینہ کمیٹی کی سفارش پر، ٹیکنالوجی اور مالی جائزہ لینے کی سفارش کے لیے نیسپاک کو تھرڈ پارٹی کنسلٹنٹ ہائیر کیا گیا۔ اب، پاور کمپنیوں نے درخواست کی ہے کہ پاور یونٹس کے آپریشن کیلیے فوری طور پر اپ ڈیٹ شدہ 75 کیوسک خام پانی کے اخراجات کی الٹرا فلٹریشن ٹیکنالوجی کی منظوری دی جاسکتی ہے اور کنسلٹنٹ کے ضروری وقت کو بھی بچایا جائے۔



اجلاس میں بتایا گیا کہ پری ٹریٹمنٹ پلانٹ کیلیے ضروری پانی کے معیار میں کچھ پیرامیٹرز ہونا چاہیں جیسے کہ بائیوکیمیکل آکسیجن ڈیمانڈ (BODs)، کیمیکل آکسیجن ڈیمانڈ (COD)، سسپینڈ سالڈس (SS)، ٹوٹل نائٹروجن (TN)، امونیا نائٹروجن (NH4+)، فیڈ واٹر فاؤلنگ انڈیکس، مفت کلورین ، آئرن اور میگنائیز۔ وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے وزیر توانائی امتیاز شیخ کو ہدایت کی کہ وہ ٹیکنالوجی کے انتخاب کی فوری ضرورت پر بات چیت کرنے کیلیے پاور کمپنیوں، ایس ای سی ایم اور نیسپاک پر مشتمل ایک مشترکہ اجلاس منعقد کریں۔ انھوں نے کہا کہ میں یہ خود بھی سوچتا ہوں کہ ہمیں اس معاملہ کو حل کرنا چاہیے تاکہ پاور پلانٹ تنصیب کے عمل کو شروع کیا جاسکے۔ مراد علی شاہ نے کہا کہ 660 میگاواٹ تھرکول پاور پلانٹ کے شروع کرنے سے اہم کامیابی حاصل ہوئی ہے لیکن ہمیں مزید پلانٹ نصب کرکے اسے بڑھانا ہوگا۔ انھوں نے کہا کہ تھر پاکستان کا مستقبل ہےاور ہمیں اس پر مزید مؤثر اور فعال طریقے سے کام کرنا ہے۔