نااہلی پر واٹر کمیشن کے حکم پر ہٹائے جانے والے سابق ڈپٹی کمشنر ملیرمحمد علی شاہ کی ایک مرتبہ پھر تعیناتی

کراچی(رپورٹ۔ منصور درانی)حکومتی خزانے کو کروڑوں کا نقصان پہنچانے اور سنگین الزامات کے ساتھ ساتھ نااہلی پر واٹر کمیشن کے حکم پر ہٹائے جانے والے سابق ڈپٹی کمشنر ملیرمحمد علی شاہ کی ایک مرتبہ پھر تعیناتی کی اطلاعات پر شہری انتظامیہ کے افسران میں سخت تشویش اور اضطراب پھیل گیا، سینئر افسران نے نااہلی پر ہٹائے گئے افسران کی دوبارہ تعیناتیوں کو واٹر کمیشن اور شہری انتظامیہ کی رٹ داﺅ پر لگانے کا عمل قرار دیدیا ہے جبکہ دوسری طرف چہیتے افسر دانش سعید کو ممبر لینڈ یوٹیلائزیشن کے اہم عہدے پر تعیناتی پر محکمہ ریونیو کے افسران میں تشویش پائی جارہی ہے،



شہری حلقوں اور سماجی تنظیموں نے سیاسی وابستگیوں اورذاتی مفادات کیلئے متنازعہ افسران کی تعیناتی کا عمل فوری بند کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے اس سلسلے میں اعلی عدلیہ سے بھی رجوع کا فیصلہ کرلیا ہے۔تفصیلات کے مطابق سندھ حکومت محکمہ ریونیو میں ایک مرتبہ پھر سیاسی بنیادوں پر متنازعہ افسران کی تعیناتیوں کا سلسلہ شروع کردیا گیا ہے جسے ہاﺅسنگ وتعمیرات سے وابستہ افراد اور سینئر افسران لینڈ مافیا کی کامیابی قرار دے رہے ہیں،ذرائع کے مطابق سابق ڈی سی ملیر محمد علی شاہ جن پر قیمتی سرکاری ونجی اراضی ٹھکانے لگانے سمیت حکومتی خزانے کو کروڑوں کا نقصان پہنچانے کے الزامات عائد کرکے عہدے سے ہٹایا گیا تھا،واٹر کمیشن کے سربراہ جسٹس ریٹائرڈ امیر ہانی مسلم نے پانچ مارچ2018ءکو جاری آرڈر شیٹ میں ڈپٹی کمشنر ملیر محمد علی شاہ کو نااہل ترین افسر قرار دیدیا تھا اور اس حوالے سے انہیں فوری عہدے سے ہٹانے کا حکم جاری کیا تھا،واٹر کمیشن نے انہیں حکومتی خزانے کو کروڑوں روپے کا نقصان پہنچانے کا ذمہ دار بھی ٹہرایا تھا ،



کمیشن کی سخت برہمی اور احکامات پر سندھ حکومت اپنے چہیتے ڈپٹی کمشنر کو ہٹانے پر مجبور ہوگئی تھی تاہم واٹر کمیشن ختم ہونے کے بعد انہی افسران کو دوبارہ اہم اور منافع بخش عہدوں سے نوازنے کا سلسلہ شروع ہوگیا ہے،ذرائع کا کہنا ہے کہ قیمتی سرکاری اراضی پر جعلسازی کے ذریئے بنائی گئیں ہاﺅسنگ اسکیموں پر جاری تحقیقات کو سبوتاژ کرنے کا منصوبہ بنایا گیا ہے جس کیلئے ریکارڈ میں ہیر پھیر کیلئے سسٹم سے وابستہ افسران کو تعینات کیا جارہا ہے،تاہم سندھ حکومت کی جانب سے اپنے چہیتے افسر دانش سعید کوممبر لینڈ یوٹیلائزیشن کے اہم عہدے پر تعینات کئے جانے پر محکمہ ریونیو کے افسران میں سخت تشویش پائی جارہی ہے جبکہ اسی طرح سابق ڈپٹی کمشنر ملیر محمد علی شاہ کو ایک مرتبہ پھر ڈپٹی کمشنر بنائے جانے کی اطلاعات پر شہری انتظامیہ اور ہاﺅسنگ وتعمیرات سے وابستہ افراد میں سخت بے چینی اور اضطراب پایا جارہا ہے،مذکورہ حلقوں نے متنازعہ افسران کی تعیناتیوں پر اعلی تحقیقاتی اداروں کے حکام سے فوری نوٹس لینے کی اپیل کی ہے۔