سارک کانفرنس کے لئے جرمنی سے منگوائی گئی 34 بلٹ پروف گاڑیوں کے استعمال پر نواز شریف سے جیل میں نیب کی پوچھ گچھ

عدالت کی اجازت سے نیب کی ایک تفتیشی ٹیم کوٹ لکھپت جیل پہنچی تاکہ جرمنی سے سارک کانفرنس کے لئے منگوائی گئی چونتیس بلٹ پروف گاڑیوں کی ڈیوٹی معاف کرنے اور بعد ازاں گاڑیوں کو اپنے ذاتی استعمال میں رکھنے کے معاملے پر سابق وزیراعظم نواز شریف سے پوچھ گچھ کی جا سکے ۔جیل سپرنٹنڈنٹ کے کمرے میں نواز شریف کی ملاقات نیب کی تفتیشی ٹیم سے کرائی گئی تفتیشی ٹیم نے ایڈیشنل ڈائریکٹر حماد حسن ڈپٹی ڈائریکٹر یونیورسٹی کیشن عبدالماجد شامل تھے نیب کا موقف ہے کہ نواز شریف کے دور میں سارک کانفرنس کے لئے جرمنی سے 34 گاڑیاں بلیٹ پروف بغیر ڈیوٹی کے منگوائی گئی ان میں سے 20 گاڑیاں نواز شریف اور مریم کے زیر استعمال رہیں یہ استعمال غیر قانونی طور پر کیا گیا اور سرکاری خزانے کو نقصان پہنچایا گیا اور اختیارات کا غلط استعمال کیا گیا۔



اس حوالے سے نیب کی تفتیشی ٹیم نے نواز شریف سے جتنے بھی جواب دیے ذرائع کے مطابق نواز شریف نے کسی سوال کا جواب نہیں دیا سابق وزیراعظم نواز شریف کا موقف تھا کہ سارے سوالات پیش کر دیے جائیں جواب اپنی قانونی ٹیم سے مشاورت کے بعد کرکے دوں گا ۔نیب کی ٹیم کی موجودگی میں نواز شریف دیگر باتیں کرتے رہے لیکن اب کے کسی سوال کا جواب نہیں دیا گیا اور یہی موقف رکھا گیا قانونی مشیروں سے مشاورت کے بعد جواب ملے گا۔