نشو ا کیس میں دارالصحت اسپتال اور والدین میں معاہدہ ہوگیا مقدمہ واپس لینے پر والد راضی

غلط انجکشن سے جاں بحق ہونے والی بچی نشو ا کے والد قیصر علی نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے بتایا ہے کہ اسپتال انتظامیہ کے ساتھ والد کا معاہدہ ہو گیا ہے تین نکاتی معاہدے کے مطابق نشوا کے والد اپنا مقدمہ واپس لینے پر رضامند ہوگئے ہیں۔ جبکہ ذرائع کا کہنا ہے کہ معاہدے کے تحت 50 لاکھ روپے سالانہ نشوا ٹرسٹ میں دیے جائیں گے ٹرسٹ کی سفارش پر سالانہ ایک بچے کو فل اسکالرشپ دی جائے گی ہسپتال میں نسواں کے نام سے بچوں کا وارڈ قائم کیا جائے گا۔


والد نے نسواں فاؤنڈیشن کو رجسٹر کرا لیا ہے۔ ذرائع کے مطابق نشو ا کے گھر والے اس بات سے سخت پریشان تھے کہ گرفتار افراد کے گھر والے ان کے یہاں آکر آہ و بکا کرتے تھے روتے تھے اور ان سے رحم کی اپیل کرتے تھے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں