نادیہ خان کی ڈرامہ سیریل ڈولی ڈارلنگ نے مقبولیت کے نئے ریکارڈ قائم کر دیے

پاکستان کی مشہور اداکارہ، ٹی وی پر ما رننگ شوز اور گیم شوز کی میزبان نادیہ خان کی کامیڈی ڈرامہ سیریل ڈولی ڈا ر لنگ نے مقبولیت کے نئے ریکارڈ قائم کر دئیے ہیں ۔جیو ٹی وی پر یکم رمضان سے شروع کی جانے والی کامیڈی ڈرامہ سیریل ڈولی ڈالنگ اس مرتبہ تمام ٹی وی چینلز کے مزاحیہ پروگراموں اور ڈراموں میں سب پر بازی لے گئی ہے اس ڈرامہ سیریل کو بہترین مزاحیہ اداکاری اور خوبصورت کہانیوں کی وجہ سے ہر عمر کے ناظرین میں بے حد پسند کیا جارہا ہے اس ڈرامے میں نادیہ خان نے اپنے کیریئر کی بہترین اداکاری کا مظاہرہ کر کے اپنے مداحوں کے دل جیت لیے ہیں ڈرامہ سیریل ڈولی ڈالنگ میں ان کے اسکرین شوہر کا کردار اعجازاسلم نہایت خوبصورتی سے نبھا رہے ہیں۔


ڈرامے کی کامیابی کا سہرا اس کے رائٹر ڈاکٹر یونس بٹ کے سر جاتا ہے جنہوں نے نہایت عمدہ جملے بازی اور مزاحیہ سکرپٹ لکھا ہے جیسے نادیہ خان اور اعجاز اسلم نے دیگر ساتھی آرٹسٹوں کے ساتھ اپنی اداکاری سے بھرپور رنگ دیا ہے اور ڈرامہ سیریل پہلے عشرے کی سپرہیٹ ڈرامہ سیریل ثابت ہوئی ہے یہ عبداللہ کادوانی اور اسد قریشی کی مشترکہ کاوش ہے اور محمد افتخار نے اسکی لارے سندھی ہے اسے پاکستان کی تاریخ کی مہنگی ترین کومیڈی ڈرامہ سیریل بھی قرار دیا جا رہا ہے خود نادیہ خان نے اسے اپنے کیریئر کی یادگار ڈرامہ سیریل کہتے ہوئے خوشی کا اظہار کیا ہے اور وہ کہتی ہیں کہ میں نے اسکرپٹ دیکھتے ہی ہاں کر دی تھی کیونکہ میں بہت ہنسنا چاہتی ہوں لیکن اسکرپٹ میرے ہاتھوں میں آتے ہیں میری آنکھوں میں خوشی کے آنسو آگئے تھے ہمارے معاشرے میں ہنسنے کے مواقع بہت کم ہیں اس ڈرامے کے ذریعہ ہم لوگوں کو ہنسانے کا موقع فراہم کر رہے ہیں۔


یہ ہمارے لیے بڑی خوشی کی بات ہے اس کی کہانیاں بہت عمدہ اور ڈائیلاگ انتہائی یادگار ہیں جنہیں سن کر دیکھنے والے تو سننے والے کی ہنسی رک نہیں سکتی 22 میں 1979 کو کوئٹہ میں پیدا ہونے والی نادیہ اسلم خان یوں تو پاکستان ٹیلی ویژن اسکرین پر اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کہیں سال سے کرتی آ رہی ہیں اسلام آباد سے دبئی تک ان کا سفر مختلف کامیابیوں سے بھرا پڑا ہے مارننگ شو کی میزبانی ہویا اب نادیہ خان شو جیسا گیم شوہو ۔ہرجگہ وہ منفرد اور کامیاب نظر آتی ہیں پٹھان فیملی میں پیدا ہونے والی نازیہ خان کی فیملی بعد میں راولپنڈی آباد منتقل ہوگئی تھی یہاں سے تو نے اپنے کیریئر کا آغاز کیا تھا انیس سو چھیانوے میں حسینہ معین کے لکھے ہوئے ڈرامے باز دو پل سے ان کے کیریئر کا آغاز ہوا تھا انیس سو ستانوے میں مشہور ڈرامہ بندھن ان کی پہچان بنا تھا 2005 میں انہوں نے اے آر وائی کے ڈرامہ سیریل کوئی تو ہو میں اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا تھا یوں تو انہوں نے کہیں یادگار ڈرامے کیے لیکن انہیں کومیڈی ڈرامہ کرنے کا موقع ایسا نہیں ملا تھا جو اس مرتبہ ڈولی ڈارلنگ میں ملا اور انہوں نے اپنے کردار کے ساتھ بھرپور انصاف کیا کافی عرصے بعد انہوں نے ایسی ہے تنہائی ڈرامہ سیریل سے کم بیک کیا تھا ڈولی ڈار لنگ ان کی پہچان بن گئی ہے اور آنے والے کئی سالوں تک انہیں ڈولی ڈارلنگ سے نکلنے کے لئے محنت کرنا پڑے گی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں