اسکردو کے قریب 15 ہزار فٹ بلند برف پوش دیو سائی مالا کے چند خوبصورت مناظر اس مقام کو ” روف آف دی ورلڈ ” بھی کہا جاتا ہے


اسکردو کے قریب 15 ہزار فٹ بلند برف پوش دیو سائی مالا کے چند خوبصورت مناظر اس مقام کو ” روف آف دی ورلڈ ” بھی کہا جاتا ہے. ایک تصویر شگری میں واقع کولڈ ڈیزرٹ ( سرد ریگستان ) کی ہے . شمالی علاقہ جات کے سیاحتی سفر کے دوران آج اسکردو کے قرب و جوار کے کئ سیاحتی مقامات دیکھنے کا موقع ملا جن میں سدپارہ لیک بھی شامل ہے .ایک چوک پر پاکستان کے مایہ ناز کوہ پیما محمد علی سدپارہ کا مجسمہ دیکھنے کابھی اتفاق ہوا

.سدا پارہ پاکستان کی ایک بلند ترین چوٹی کو سر کرتے ہوئے لاپتہ ہوگئے تھے ان کی یاد میں یہ مجسمہ نصب کیا گیا ہے.

اسکردو میں اس وقت موسم بہت معتدل اور خوشگوار ہے دن میں درجہ حرارت 15 ,16 اور رات کو 7 یا 8 سنٹی گریڈ کے درمیان ہوتا ہے. حکومت کی جانب سے سیاحتی مقامات کھولے جانے کے بعد اس وقت مقامی ہوٹلز اور گیسٹ ہاوسز سیاحوں سے کھچا کھچ بھرے ہوئے . لگتا ہے کرونا کا شور صرف ملک کے بڑے شہروں تک ہی محدود ہے. گلگت بلتستان اور اسکردو میں کہیں بھی لوگوں میں کرونا کا کوئی خوف نظر نہیں آیا لوگوں کی غالب اکثریت فیس ماسک اور کسی بھی قسم کی ایس او پی سے بے نیاز ہے. اسکول کالج اور یونیورسٹی سمیت تمام تعلیمی ادارے حسب معمول کھلے ہوئے ہیں اور ہر جگہ معمولات زندگی بڑے پرسکون ماحول میں جاری و ساری ہیں.
—————-
Muniruddin -is -a -sr-journalist-from-Karachi