کان کنوں کی حفاظت کے لئے تربیتی کورس پر مبنی کتابوں کی اشاعت سندھ حکومت کا ایک اور اہم اقدام ہے۔امتیاز احمد شیخ

کان کنوں کی حفاظت کے لئے تربیتی کورس پر مبنی کتابوں کی اشاعت سندھ حکومت کا ایک اور اہم اقدام ہے۔امتیاز احمد شیخ کتابوں میں موجود ہدایات اور حفاظتی تدابیر سے آگاہی کے لئے کان کنوں کو تربیتی کورس بھی کرائے جائیں گے۔امتیاز احمد شیخ  محنت کشوں کے حقوق کا تحفظ سندھ حکومت کی اولین ترجیحات میں شامل ہے۔امتیاز احمد شیخ کراچی یکم جون ۔ کان کنوں کےلئے حفاظتی تدابیر پر مبنی تربیتی کورس کی کتابوں کی اشاعت، محنت کشوں کے بہبود کے ضمن میں سندھ حکومت کا اہم اقدام ہے۔ ان خیالات کا اظہار وزیر توانائی سندھ امتیاز احمد شیخ نے آج اپنے دفتر میں سیکریٹری توانائی سندھ طارق علی شاہ اور سندھ لاکھڑا کول مائننگ کمپنی (SLCMC) کے افسران کے ساتھ منعقدہ اجلاس میں کیا۔اس موقع پر وزیر توانائی سندھ کو سندھ لاکھڑا کول مائننگ کمپنی کی جانب سے کان کنوں کے لئے ایک ماہ کے تربیتی کورس پر مبنی دو کتابیں بعنوان ” کوئلے کی کان میں بچاو ¿ اور ریسکیو ” اور ” کوئلے کی کان میں مائن سردار کا کردار ” بھی پیش کی گئیں 55 صفحات پر مبنی پہلی کتاب ” کوئلے کی کان میں بچاو ¿ اور ریسکیو” میں رنگین تصاویر کے ساتھ نہایت آسان الفاظ میں کان کنوں کو بتایا گیا ہے کہ کان میں کام شروع کرنے سے پہلے کن کن اقدامات کی ضروری چیک لسٹ پر عملدرآمد ضروری ہے۔ کتاب میں کوئلے کی کان میں گیسوں کی موجودگی کا پتا لگانے کے ساتھ ساتھ کان میں کام کرنے کے لئے ماحول کو سازگار بنانے جیسے بیشتر حفاظتی اقدامات سے آگاہی بھی دی گئی ہے۔66 صفحات پر مبنی دوسری کتاب ” کوئلے کی کان میں مائن سردار کا کردار” میں بتایا گیا ہے کہ کان کنوں کا سپروائزر ہی دراصل مائن سردار ہوتا ہے اور مائن سردار اجازت دیتا ہے تو کان کن، کان میں اتر کر کام شروع کرتے ہیں۔ کتاب میں مائن سردار کے اہم فرائض پر تفصیل سے روشنی ڈالی گئی ہے اور بتایا گیا ہے کہ مائن سردار کی سب سے اہم زمہ داری مائن انسپکشن ہوتی ہے جو اسے کام شروع کرنے سے دو گھنٹے پہلے مکمل کرلینی چاہئے۔ مائن سردار کو مائن انسپکشن اور کان کنی میں کن کن باتوں کا خیال رکھنا چاہئے ان تمام امور پر کتاب میں رنگین تصاویر کے ساتھ ہدایات موجود ہیں۔وزیر توانائی سندھ امتیاز احمد شیخ نے کان کنوں کی حفاظت کے لئے تربیتی کورس پر مبنی ان دونوں کتابوں کی اشاعت کو محکمہ توانائی سندھ کا خوش آئند اقدام قرار دیتے ہوئے سندھ لاکھڑا کول مائننگ کمپنی کی کاوشوں کو بھی سراہا اور کہا کہ کتابوں میں موجود ہدایات کی تربیت اور آگاہی کے لئے کان کنوں کو لاکھڑا میں ہی تربیتی کورسز بھی کروائے جائیں نیز مائننگ کمپنیوں کو پابند کیا جائے کہ وہ کان کنوں کو تمام پرسنل پروٹیکٹیو ایکوپمنٹ (PPEs) لازماً مہیا کریں اور جو کمپنیاں یا ٹھیکیدار ان ہدایات کی خلاف ورزی کے مرتکب ہوں ان کے خلاف سخت تادیبی کارروائی کی جائے۔ ہینڈ آو ¿ٹ نمبر 534۔۔۔ایس اے این