گل محمد لاٹ … پاکستان کا ایک ہیرا سیاستدان

گل محمد لاٹ کا شمار پاکستان کے ان قابل فخر سیاستدانوں میں ہوتا ہے جنہوں نے سیاست میں اخلاقیات اصولوں حسن سلوک رواداری اور اقدار کی ہمیشہ پاسداری کی دوسروں کے ساتھ عزت اور احترام سے پیش آئے اس لئے خود بھی بے حد عزت اور احترام کی نگاہ سے دیکھے جاتے ہیں۔ پاکستان میں پسماندگی کی مثال بن جانے والے تھر کے علاقے ڈپلو میں پیدا ہونے والے گل محمد لاٹ کا تعلق پاکستان کے ایک مشہور بزنس مین گھرانے سے ہے لاٹ خاندان کی اپنے علاقے صوبے اور ملک کے لیے گراں قدر خدمات ہیں ۔ان کے خاندان نے مصالحہ جات کے کاروبار میں دنیا بھر میں شہرت اور مقبولیت حاصل کی اللہ نے ان کے خاندان کو اس کاروبار میں بہت نوازا ہے۔وہ پاکستان میں سب سے زیادہ ٹیکس ادا کرنے والے افراد میں سب سے نمایاں ہیں۔


انہوں نے لندن بزنس اسکول اور پی یونیورسٹی آف سندھ سے اعلیٰ تعلیم حاصل کی وہ انیس سو نوے میں سندھ اسمبلی کے ممبر منتخب ہوئے انہوں نے انیس سو ترانوے میں وزیر ماحولیات کی حیثیت سے فرائض انجام دیے 2002 میں انہیں سندھ کونسل کا ممبر بنایا گیا وہ شروع سے ہی پاکستان پیپلزپارٹی کا حصہ رہے ۔2008 میں انہیں وزیراعلی کا مشیر برائے اینٹی کرپشن مقرر کیا گیا۔2009 سے 2015 تک انہوں نے پاکستان میں بطور سینیٹر 6سال تک شاندار اور یادگار انداز میں خدمات انجام دیں ۔وہ پاکستان میں بہترین مصالحہ جات تیار کرنے والے مہران گروپ آف انڈسٹریز کے چیئرمین ہیں ۔ایک بہترین سیاستدان اور کامیاب بزنس مین کے ساتھ ساتھ ایک انتہائی فرماں بردار بیٹے ۔زبردست پیار کرنے والے شوہر اور انتہائی شفقت سے پیش آنے والے باپ ہیں۔


وہ سچے پاکستانی اور محب وطن سیاستدان ہیں انہوں نے سابق وزیر اعظم بے نظیر بھٹو شہید کے ساتھ بہت سا وقت گزار کر سیاسی تربیت حاصل کی انہیں سابق صدر آصف علی زرداری سے قربت حاصل رہی ۔وہ پاکستان کی ترقی اور خوشحالی کے لیے کوشش اور دعا گو ہیں تھر کے پسماندہ علاقے میں انہوں نے غریب خاندانوں کی مدد اور ان کی زندگیوں میں بہتری لانے کے لئے ذاتی طور پر اسی طور پر کافی محنت کی ہے لوگ ان کی بے پناہ عزت کرتے ہیں ۔بنیادی طور پر وہ ایک صاف گو کھرے اور سیدھی بات کرنے والے انسان ہیں۔اللہ تعالی نے ان کی شخصیت میں کافی اوصاف رکھے ہیں وہ ہمدرد اور مہربان انسان ہیں سماجی بھلائی کے کاموں میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتے ہیں لوگوں کے دکھ بانٹتے ہیں اگر میں خوشی میں شریک ہوتے ہیں انسانوں کو ذات پات مذہب فرقے زبان علاقے کی بنیاد پر تقسیم نہیں کرتے بلکہ انسانیت کی قدر کرتے ہیں خوش مزاج خوش لباس خوش گفتار انسان ہیں سچی بات ہے پاکستانی سیاست میں اب ایسے لوگ خال خال ملتے ہیں۔


اپنا تبصرہ بھیجیں