پی ٹی آئی مریم نواز سے خوفزدہ ۔… پارلیمنٹ میں آنے سے روکنے کی تیاریاں

پاکستان تحریک انصاف کی حکومت سابق وزیراعظم نواز شریف کی صاحبزادی مریم نواز سے خوفزدہ ہے مریم نواز کو پارٹی میں نائب صدر کا عہدہ ملنے پر پی ٹی آئی نئے الیکشن کمیشن میں درخواست دائر کرکے انہیں آگے بڑھنے سے روکنے کی کوششیں شروع کردی ہیں مریم نواز شریف کا اگلا ہدف پارلیمنٹ کی اہم نشست ہے جہاں آنے سے انہیں روکنے کے لیے پی ٹی آئی سرگرم ہوگئی ہے مریم نواز کو مسلم لیگ نون میں نائب صدر کا عہدہ ملنے کے بعد پی ٹی آئی میں جتنی کھلبلی مچی ہوئی ہے اس سے ایک بات پھر ثابت ہوگئی ہے کہ یہ لوگ ڈرتے ہیں ایک نہتی لڑکی سے۔
پاکستان تحریک انصاف کی جانب سے بیرسٹر ملائکہ بخاری ۔میاں فرخ حبیب ۔جویریہ ظفر آہیر اور کنول شوزب اکٹھے ہو کر مریم نواز کے خلاف الیکشن کمیشن میں درخواست لے کر گئے ہیں اور موقف اختیار کیا ہے کہ مریم نواز کی مسلم لیگ نواز میں بطور نائب صدر تقریریں آئین اور قانون کے تقاضوں سے متصادم ہیں۔


دلچسپ بات یہ ہے کہ ان درخواست گزاروں میں سے کسی نے بھی اس وقت اعتراض نہیں کیا جب سپریم کورٹ سے نااہل قراردیئے جانے والے جہانگیر ترین کو عمران خان نے کابینہ کے اجلاس میں اپنے ساتھ بٹھایا ان میں سے کسی نے بھی وزیراعظم کے خلاف آواز نہیں اٹھائی اور کسی کو قانون اور این یاد نہیں آیا نہ کسی کو سپریم کورٹ کا فیصلہ یاد رہا۔
اسی لیے خواجہ آصف کو یاد دلانا پڑا کہ جس کی سزا ختم ہو چکی ہے اسے نائب صدارت کا عہدہ دینے پر شور مچایا جارہا ہے اور جس کی اپیل نااہلی کے خلاف مسترد ہوچکی ہے اسے کابینہ اجلاس میں ساتھ بٹھایا جاتا ہے۔
وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ عدالت کی جانب سے کسی شخص کو سزا سنائے جانے کی صورت میں اسے پارٹی عہدہ نہیں دیا جاسکتا مریم نواز عدالت سے سزا یافتہ ہیں انہیں مسلم لیگ نواز کی نائب صدارت دیے جانے پر قانونی جنگ لڑیں گے۔
دوسری جانب مسلم لیگ نے مریم نواز کو نائب صدر کا عہدہ دیئے جانے کے فیصلے اور ان کے خلاف آنے والی درخواستوں پر ان کا بھرپور قانونی دفاع کرنے کا اعلان کیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں