سپریم کورٹ نے کراچی تجاوزات کیس میں وزیر بلدیات کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کردیا – عدالت نے اپنے ریمارکس میں کہا کے کراچی میں 70 فیصد تعمیرات غیر قانونی ہیں

سپریم کورٹ کراچی رجسٹری میں شہر میں تجاوزات سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی جس سلسلے میں اٹارنی جنرل، سیکریٹری دفاع اور دیگر حکام عدالت میں پیش ہوئے۔سیکریٹری دفاع کی جانب سے رپورٹ پیش کی گئی جسے عدالت نے مسترد کردیا۔ جسٹس گلزار احمد نے کہا کہ رپورٹ مبہم ہے، عدالتی احکامات پر عمل کیوں نہیں ہوا، یہ رپورٹ غیر اطمینان بخش اور آنکھوں میں دھول جھونکنے کے مترادف ہےاس پر اٹارنی جنرل نے مؤقف اپنایا کہ سپریم کورٹ کا حکم ہے، مجھے وضاحت کا موقع دیا جائےعدالت نے تجاوزات کے خلاف بیان دینے پر وزیر بلدیات اور میئر کراچی پر برہمی کا اظہار کیا۔
جسٹس گلزار احمد کا کہنا تھا کہ کہاں ہیں وہ بلدیاتی وزیر جو کہتے پھررہے ہیں ہم ایک بھی بلڈنگ نہیں گرائیں گے، میئر کراچی بھی بولتے پھر رہے ہیں ہم عمارتیں نہیں گرائیں گے، کیا انہوں نے عدالت سے جنگ لڑنی ہے؟ ہم پہلے سب کوسن لیں پھر دیکھتے ہیں ان کو کہاں بھیجنا ہےمعزز جج نے مزید کہا کہ پورے شہر میں لینڈ مافیا منہ چڑھا رہا ہے اور یہ ایسی باتیں کرتے رہے ہیں ۔


جسٹس گلزار احمد نے صوبائی وزیر بلدیات سعید غنی کی تقریر کا بھی نوٹس لے لیا،عدالت نے ڈی جی ایس بی کو ہدایت دیتے ہوئے کہا ماسٹر پلان میں اب تک جس جس نے ترمیم کی ہے مکمل تفصیلات دیں،کس کے کہنے پر ترامیم ہوئیں اور رفاعی پلاٹوں کو الاٹ کیا گیا؟ مکمل رپورٹ پیش کریں عدالت نے کراچی سرکلر ریلوے ایک ماہ میں چلانے کا حکم دیتے ہوئے ریمارکس دیے کے ریلوے اراضی سے ہر حال میں دو ہفتے میں تجاوزات ختم کی جائیں،  چیف سیکریٹری کو میئر کراچی اور دیگر حکام کے ساتھ مل کر آپریشن کرنے کا حکم دیا، سپریم کورٹ کراچی رجسٹری نے اپنے 22 جنوری کے فیصلے میں کراچی کو 40 سال پرانی حالت میں بحال کرنے کا حکم دیا تھا اور اس ضمن میں پارک، کھیلوں کے میدان اور اسپتالوں کی اراضی بھی واگزار کرانے کا حکم دیا وزیر بلدیاتی سعید غنی اور میئر کراچی نے سپریم کورٹ کے احکامات پر عملدرآمد نہ کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ شہر میں رہائشی عمارتیں نہیں گراسکتےجسٹس گلزار احمد نے وزیر بلدیات سعید غنی کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کرتے ہوئے ریمارکس دئیے،کراچی میں 70 فیصد تعمیرات غیر قانونی ہیں، 22 جنوری کو کراچی صاف کرنے کا حکم دیا تھا ،

اپنا تبصرہ بھیجیں