36

ڈالر حکومت کے کنٹرول سے باہر ۔۔۔۔۔ ایف آئی اے کے چھاپے کیا کریں گے؟

ڈالر کو جیسے پر لگ گئے ہیں۔ ڈالر حکومت کے کنٹرول میں نہیں۔ ایف آئی اے کے ذریعے چھاپے مارے جا رہے ہیں ہنڈی اور حوالہ کے معاملے پر کرنسی ضبط کی جا رہی ہے لیکن ماہرین حیران ہیں کہ کیا اس طرح ڈالر حکومت کے کنٹرول میں آجائے گا ؟ ملک کا کل بجٹ 5932 ارب روپے ہے حکومت نے 8 ماہ میں 3400 ارب روپے قرض لے لیا ہے اگر اپریل مئی اور جون کے مہینوں کا قرض بھی شامل کر لیں تو حکومت بجٹ سے پہلے کل بجٹ کے برابر کردہ لے چکی ہو گی اور معاشی ماہرین کے مطابق یہ سیدھی سادی تباہی ہے ۔ ٹیکسوں کے ریونیو میں 236 ارب روپے کا شارٹ فال ہے یہ شارٹ فال بجٹ تک 450 ارب روپے ہو جائے گا ۔ بجلی کی قیمت میں اوسطا ایک روپیہ 27 پیسے فی یونٹ۔ گیس کی قیمت میں 143 فیصد۔ پیٹرول کی قیمت میں 11 فیصد اضافہ ہو گیا ہے مہنگائی ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ 10 فیصد تک پہنچ گئی ہے ۔جبکہ طویل جنگ سے تباہ حال افغانستان میں مہنگائی صرف 4 چار فیصد ہے ۔ دنیا کی سب سے بڑی آبادی چین میں رہتی ہے وہاں مہنگائی کی شرح 1.7 فی صد ہے مسائل میں گھرے بھارت میں 2.5 فیصد ۔ بنگلہ دیش میں 5 اعشاریہ چار فیصد ۔ سری لنکا میں چار اعشاریہ تین فیصد ہے۔




اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں